بسم اللہ الرحمن الرحیم
یوں تو اتنی جلدی کسی اپڈیٹ کی ضرورت نہیں تھی لیکن کچھ اعتراضات اور مشورے ایسے تھے کہ ان کے حل کے لئے اپڈیٹ دینی پڑ گئی ہے۔ ”پاک اردو انسٹالر“ میں ابھی تک کسی مسئلہ کی اطلاع تو موصول نہیں ہوئی لیکن کچھ دوستوں کا مشورہ تھا کہ ونڈوز ایکس پی اور وسٹا/سیون کے لئے علیحدہ علیحدہ انسٹالر کی بجائے ایک ہی ”پاک اردو انسٹالر“ ہو جو ونڈوز کے تینوں ورژن پر چلے۔ تو جناب اللہ کے فضل سے وہ کام بھی مکمل ہو گیا ہے۔ اب ونڈوز کے ہر ورژن کے لئے علیحدہ علیحدہ انسٹالر کی بجائے ایک ہی ”پاک اردو انسٹالر“ ونڈوز کے تینوں ورژن یعنی ایکس پی، وسٹا اور سیون پر چلے گا۔
پہلے علیحدہ علیحدہ انسٹالر بنانے کی ایک وجہ یہ تھی کہ ونڈوز وسٹا/سیون کی نسبت ایکس پی کے انسٹالر کا سائز تھوڑا زیادہ بن رہا تھا، تو سوچا کہ علیحدہ علیحدہ انسٹالر بناتا ہوں تاکہ ونڈوز سیون اور وسٹا والے کم سائز والا ہی ڈاؤن لوڈ کریں اور دوسری وجہ یہ کام تھوڑا سا مشکل تھا۔ خیر اب دوستوں کی فرمائش پر ایک ہی ”پاک اردو انسٹالر“ تیار کر دیا ہے۔ جو آپ یہاں سے ڈاؤن لوڈ کر سکتے ہیں۔

 
معیاری اردو کی بورڈ لے آؤٹ
کچھ دوستوں کا خیال ہے کہ کوئی معیاری اردو فونیٹک کی بورڈ لے آؤٹ ہونا چاہئے۔ یہ بات تو میں خود کئی سال سے کہتا آ رہا ہوں۔ جس کی ایک چھوٹی سی مثال اردو محفل کے تھریڈ میں دیکھی جا سکتی ہے۔ جہاں تک میری معلومات ہے اس کے مطابق اس وقت جتنے بھی اردو فونیٹک کی بورڈ لے آؤٹ ہیں وہ سب کے سب تقریبا ایک جیسے ہی ہیں۔ بنیادی حرف مکمل طور پر ایک جیسے ہیں۔ معمولی سے فرق یہ ہیں کہ کسی میں کچھ اضافی سہولیات ہیں اور کسی میں نہیں۔ خیر ”پاک اردو انسٹالر“ میں جو فونیٹک کی بورڈ لے آؤٹ شامل کیا گیا ہے اس میں اردو حروف کے علاوہ عربی حروف اور قرآن پاک کے رموزِ اوقاف کی سہولت ہونے کے ساتھ ساتھ واوین(”“)، مکمل اعراب اور دیگر نشانات کی مکمل سہولت دستیاب ہے۔ اس کی بورڈ کا خاکہ ”پاک اردو انسٹالر“ میں بھی شامل کیا گیا ہے تاکہ نئے لوگوں کو آسانی ہو سکے۔ مزید آپ وہ خاکہ نیچے والی تصویر میں دیکھ سکتے ہیں۔

 
پہلے اردو انسٹالر موجود ہیں تو پھر نیا کیوں؟
کچھ دوستوں کا خیال ہے کہ پہلے انسٹالر موجود ہیں تو پھر نیا انسٹالر کیوں بنایا گیا؟ بلکہ پہلے سے بنے ہوئے کو مزید بہتر کرنا چاہیئے تھا۔ ویسے میں ایسی تنقید (جس کے پیچھے نقاد کی اپنی کوئی تحقیق نہ ہو) کا جواب دینے کی بجائے کام کرنے کو ترجیع دیتا ہوں لیکن سوچا چلو کچھ لکھ دیتے ہیں تاکہ تنقید کرنے والے میرے محترم دوستوں کو بھی علم ہو جائے گا اور ساتھ ساتھ دیگر دوستوں کو جنہیں اس انسٹالر ٹیکنالوجی کے بارے میں کچھ خاص نہیں پتہ انہیں بھی تھوڑی بہت بنیادی معلومات مل جائے گی۔

 
سب سے پہلی بات تو یہ کہ میں ذاتی طور پر شروع سے پہیہ ایجاد کرنے کے حق میں نہیں ہوں اور نہ ہی میرے پاس اتنا وقت ہے۔ میرے کچھ بہت ہی قابلِ احترام دوستوں کو علم نہیں کہ ”پاک اردو انسٹالر“ جیسا انسٹالر پہلے موجود نہیں تھا۔ اگر ہوتا تو میں اس پر وقت لگانے کی بجائے کوئی اور تعمیری کام کرنا پسند کرتا۔ ”پاک اردو انسٹالر“ اپنی نوعیت کا پہلا مکمل اردوانسٹالر ہے اور ویسے بھی دوسرے انسٹالر اور اس میں ٹیکنالوجی کے لحاظ سے کافی فرق ہے۔ خیر کچھ دن پہلے انسٹالر کے بارے میں جب کام شروع ہوا تو میری معلومات کے مطابق دو جگہوں یعنی ابوشامل صاحب کے بلاگ اور اردو محفل پر بحث کی گئی۔ ان دونوں لنکس پر واضح طور پر گواہی موجود ہے کہ جو کام مطلوب ہے وہ آج سے پہلے نہیں ہوا بلکہ پہلے جو انسٹالر بنے ہوئے ہیں ان کے بنانے والوں نے خود بحث میں حصہ لیا تھا۔ ڈویلپرز نے جن ٹیکنالوجیز کو استعمال کیا ان کا بھی بتایا اور پھر یہ بھی بتایا کہ اس میں کس حد تک بہتری لائی یا نہیں لائی جا سکتی اور اس بات پر بھی اتفاق ہوا کہ ایک سے زائد اردو انسٹالر ہونے میں بھی کوئی حرج نہیں۔ میرے علم میں تو یہ بات پہلے ہی تھی اور میں اس انسٹالر کو کئی دفعہ استعمال بھی کر چکا تھا لیکن کئی لوگوں کو پہلی دفعہ پتہ چلا کہ نبیل بھائی نے بہت پہلے ونڈوز ایکس پی میں اردو ایکٹیو کرنے کے لئے انسٹالر بنایا تھا لیکن مسئلہ وہی تھا کہ ایک انسٹالر ایسا چاہئے تھا کہ جس واحد انسٹالر سے اردو ایکٹیو، اردو فونٹس اور اردو کی بورڈ لے آؤٹ انسٹال ہو سکیں۔ خیر اب کی بار نبیل بھائی NSIS کو استعمال کرتے ہوئے انسٹالر بنانے کی کوشش میں تھے یا ہیں۔ NSIS کو میں نے آزمایا تھا لیکن میری تھوڑی سی عقل کے مطابق میرے لئے NSIS بہتر نہیں تھا کیونکہ میرے لئے یہ کافی مشکل ثابت ہو رہا تھا اس لئے میں نے NSIS کو سمجھنے کی مزید کوشش ہی نہیں کی تھی۔

نبیل بھائی کے علاوہ عامر شہزاد بھائی نے ونڈوز کی ایک سہولت IExpress کو استعمال کرتے ہوئے Self-Extracting Package بنایا تھا۔ جہاں تک مجھے معلوم ہے اس کے مطابق IExpress خود سے انسٹالر بنانے کی بجائے پہلے سے بنے ہوئے انسٹالر کو ایک ایک کر کے چلاتا ہے۔ عامر شہزاد بھائی نے بھی ایسا ہی کیا کہ فونٹس اور کی بورڈ لے آؤٹ کے پہلے سے بنے ہوئے انسٹالرز کو IExpress میں ایک ساتھ کیا اور ایک نیا Self-Extracting Package تیار کیا۔ یہ سسٹم ونڈوز وسٹا اور سیون میں اردو فونٹس اور اردو کی بورڈ لے آؤٹ کے پہلے سے بنے ہوئے انسٹالر کو چلانے میں تو کامیاب رہا لیکن ونڈوز ایکس پی میں اردو ایکٹیو کرنے والی بات وہیں کی وہیں رہی۔ اس پیکیج میں تیسرا اردو ایکٹیو کرنا والا نبیل بھائی کا انسٹالر شامل تو کیا جاسکتا تھا لیکن پہلی بات تو یہ کہ تین انسٹالر ایک ساتھ چلانے کے لئے Batch فائل بنانے کی ضرورت تھی اور دوسرا تین انسٹالر ایک Self-Extracting Package میں ڈالنے سے انسٹالیشن کے لئے کئی ایک Next, Close اور Finish کرنے کی ضرورت تھی جس سے میری ذاتی رائے کے مطابق کام لمبا اور پیکیج کا سائز بھی بڑا ہو جانا تھا۔
جیسے جیسے میں دوسرے دوستوں کی انسٹالر کے بارے میں اپڈیٹ پڑھتا تو کام روک دیتا کہ شاید یہ بنا لیں تو مجھے محنت نہ کرنی پڑے لیکن جب نبیل بھائی نے کہا کہ ایک سے زیادہ انسٹالر ہونے میں کوئی حرج نہیں تو پھر میں نے دوبارہ کوشش کی۔ اللہ کے فضل سے، نبیل اور عامر شہزاد جیسے دوستوں کے پھیلائے ہوئے علم سے ”پاک اردو انسٹالر“ بنا دیا۔

 
تنقید بہت اچھی چیز ہے اور ضرور ہونی چاہئے لیکن اس صورت میں جب آپ اصلاح کر رہے ہوں۔ کسی چیز کی مکمل معلومات کے بغیر بلاوجہ تنقید آپ کو خود بھی نقصان دیتی ہے اور کئی تعمیری کام متاثر بھی ہو سکتے ہیں۔ اس لئے جس موضوع پر اپنا فلسفہ بیان کرنے جا رہے ہیں پہلے اس موضوع پر عبور تو حاصل کر لیں یا پھر کم از کم اس کی بنیادی معلومات تو جمع کر لیں۔ دوستو! آپ سب کی تنقید برائے تعمیر سر آنکھوں پر اور ہمیں آپ کی تنقید کی بہت ضرورت ہے لیکن خدا کے لئے تھوڑا سا دھیان رکھیں۔ میری چھوڑیں کیونکہ میں تو آٹے میں نمک کے برابر بھی نہیں لیکن دیگر جو لوگ بغیر کسی لالچ کے صرف اردو کی محبت میں اردو کی ترویج کے لئے کئی طرح کے کام کر رہے ہیں اور دن رات ایک کر دیتے ہیں۔ کم از کم ان کو ایک دوسرے کے مدِمقابل لانے اور لڑانے کی کوشش نہ کریں نہیں تو ایسی تنقید سے آپ تو لطف اندوز ہو جائیں گے لیکن اردو جو پہلے بہت پیچھے ہے اور پیچھے رہ جائے گی۔